مئی 18, 2024

ڈیلی سویل۔۔ زمیں زاد کی خبر

Daily Swail-Native News Narrative

کلٹ کلچر: آخر یہ ہے کیا۔۔؟ ۔۔۔|| اظہر عباس

کلٹ کو ممکنہ یا نئے بھرتی کرنے والوں کے لیے خاص طور پر پرکشش بنایا جاتا ہے، اراکین کو عام طور پر یہ احساس نہیں ہوتا کہ یہ دوستانہ، دلچسپ چیز جس کے لیے انہوں نے سائن اپ کیا ہے، یہ گروپ جس نے بہت سارے وعدے کیے ہیں اور اچانک انھیں اپنے تعلق اور اپنائیت کا احساس اور بہت سے دوست اور ساتھی فراہم کیے ہیں، دراصل ایک کلٹ ہے۔

اظہرعباس

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کلٹ ایک ایسا گروہ ہوتا ہے جس کے اراکین ایک یا متعدد مشترکہ نظریات رکھتے ہیں جو مذہب، روحانیت، فلسفہ، یا کسی خاص مقصد یا شخصیت پر یقین کی ایک خاص تشریح پر مبنی ہوتے ہیں۔

لفظ ‘کلٹ’ کسی کو فوراً مانسن فیملی، یا رجنیش موومنٹ کی یاد دلاتا ہے، لیکن یہ صرف چند معروف کلٹ ہیں، جن کے اراکین میں کچھ ایسے لوگ شامل تھے جو عوام کی نظروں میں تھے، مثال کے طور پر برنارڈ لیون، پروین بابی ، مہیش بھٹ، ٹیرنس سٹیمپ، اریانا ہفنگٹن، ونود کھنہ، ہینوور کے پرنس ویلف ارنس وغیرہ رجنیش فرقے سے وابستہ؛ اور شیرون ٹیٹ، فل کاف مین، ڈیانا مارٹن (ڈین مارٹن کی بیٹی)، اور مینسن فیملی سے وابستہ اسکوئی فروم (جس نے جیرالڈ فورڈ کو قتل کرنے کی کوشش کی)۔

کلٹ پرکشش ہوتے ہیں کیونکہ وہ امن اور راحت کا واہمہ پیش کرتے ہیں۔

کلٹس کم خود اعتمادی والے لوگوں کے لیے اور بھی زیادہ پرکشش ہوتے ہیں، جو کسی گروپ سے تعلق رکھنے، دوست رکھنے، قبول کیے جانے، یا ‘بڑی’ چیز میں شامل ہونے کی خواہش رکھتے ہیں۔

کلٹ کو ممکنہ یا نئے بھرتی کرنے والوں کے لیے خاص طور پر پرکشش بنایا جاتا ہے، اراکین کو عام طور پر یہ احساس نہیں ہوتا کہ یہ دوستانہ، دلچسپ چیز جس کے لیے انہوں نے سائن اپ کیا ہے، یہ گروپ جس نے بہت سارے وعدے کیے ہیں اور اچانک انھیں اپنے تعلق اور اپنائیت کا احساس اور بہت سے دوست اور ساتھی فراہم کیے ہیں، دراصل ایک کلٹ ہے۔

کلٹس ‘ہم بمقابلہ ان’ کی ذہنیت کو فروغ دیتے ہیں، جو ہمارے جیسے معاشروں میں پہلے سے ہی ایک بڑا عنصر ہے جہاں حاصل اور نہ ہونے کے درمیان بہت بڑی خلیج اس رویہ کو فروغ دیتی ہے۔ انہیں یہاں بھرتیاں حاصل کرنے میں کوئی پریشانی نہیں ہوتی۔

کسی کلٹ میں شامل ہونا اسے چھوڑنے سے زیادہ آسان ہے۔ کسی کو چھوڑنے کی کوشش کرنے کی سزا میں اس شخص اور اس کے خاندان کے لیے تکالیف یہاں تک کہ موت بھی شامل ہو سکتی ہے۔ یہ سنگین حقیقت تنظیم کو ایک خوفناک قسم کی طاقت حاصل کرنے میں مدد کرتی ہے۔

بہت سے کلٹ اس جوش و خروش فراہم کرنے کے قابل ہوتے ہیں جو نوجوان لوگوں کو بہت پسند ہے۔ مصنوعی جوش پیدا کرنے کیلئے نشہ آور اشیا کی فراوانی سے فراہمی اس کا کلیدی عنصر ہے۔

کلٹ کے رہنما دماغ پر قابو پانے میں اچھے ہوتے ہیں، اور لوگوں کو وہی کروانے کی صلاحیت رکھتے ہیں جو وہ چاہتے ہیں۔ وہ لالچ دینے میں مہارت رکھتے ہیں، وہ وعدے کرتے ہیں جو مکمل طور پر غیر حقیقی ہو سکتے ہیں، اور اسے اپنی آسان رسائی کے اندر ظاہر کرتے ہیں۔ وہ خود اپنی پروجیکشن میں بھی اچھے ہوتے ہیں، اکثر اپنی ایسی تصویر پیش کرتے ہیں جو طاقتور ہے، اور حقیقت کے بالکل برعکس ہے۔ مثال کے طور پر مانسن کے پیروکاروں میں سے ایک نے بعد میں کہا کہ مینسن کو کبھی یہ نہیں کہنا پڑا کہ وہ یسوع ہے۔ یہ صرف ‘واضح’ تھا۔

ایسا لگتا ہے کہ پاکستان میں ہم کلٹ کلچر سے نسبتاً آزاد ہیں، لیکن یہ سچ نہیں ہے۔

ہمیں پاکستان میں یہ سمجھنا چاہیے کہ ہمارے اصل مخالف کون ہیں، اور وہ ایک اور طاقتور کلٹ ہیں، اور ہمارا کلچر ہے جو طاقت اور کلٹس کی طرف بہت زیادہ اور آسانی سے راغب ہو سکتا ہے۔ اس بات پر توجہ دینا ضروری ہے کہ ایسا کیوں ہے۔

کچھ تجویز کردہ حل ایک زیادہ وسیع اور بہتر تعلیم، اور نوجوانوں کے لیے مزید سہولیات ہیں جہاں وہ فزیکل سرگرمیوں میں حصہ لے سکیں اور اپنی توانائی، ذہنی اور جسمانی دونوں طرح سے خرچ کر سکیں۔ ایک بڑا پہلو انہیں مذہب کے حوالے سے ایک بہتر، زیادہ عقلی نقطہ نظر فراہم کرنا ہے۔ اور ایک ایسا معاشرہ جس میں محنت رنگ لاتی ہے، یہاں تک کہ اہم جگہوں پر ’رابطے‘ کی عدم موجودگی میں بھی۔ ایسا معاشرہ جس میں رشوت، بھتہ خوری اور اپنے حق کے لیے لڑنے کی کوئی مجبوری نہ ہو۔

(جاری ہے)

جلسے جلسیاں:عوامی جوش و بے اعتنائی ۔۔۔ نصرت جاوید

سینیٹ انتخاب کے لئے حکومت کی ’’کامیاب‘‘ حکمتِ عملی ۔۔۔ نصرت جاوید

اظہر عباس کے مزید کالم پڑھیں

%d bloggers like this: