اکتوبر 28, 2021

ڈیلی سویل۔۔ زمیں زاد کی خبر

Daily Swail-Native News Narrative

عزیز شاہد ، عزیز شاہد است ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔||عابد بلال

ان کی پہلی شادی1910 ءمیں ہوئ۔ ایک لڑکی ودیا پیداہوئ پانچ سال بعد دوسری شادی کی جس سے ایک لڑکا جگن ناتھ آزاد 5دسمبر1918 ءمیں پیدا ہوا۔اس دوران ان کی 22 سالہ بیٹی نے سسرال میں اپنے جسم پر تیل چھڑک کر خود کو نذرآتش کر لیا۔

عابد بلال

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آہدن سرائیکی زبان بہوں مٹھی زبان ہے ایندے وچ کوئ شک نئیں،
اگر اوں مٹھاس کوں کوئ ہک ,,ناں,, ڈتا ونجے تاں او بݨدے عزیز شاہد،
اے سرائیکی زبان دی خوش بختی ہے ایکوں عزیز شاہد جھیاں شاعر ملیے ، خیال کوں خیال دی خواہش مطابق لفظ دان کرݨ تاں کوئ شاہد صاحب کنوں سکھے، اتنا مقدس ومعصوم لہجہ تاں شاید کہیں بئ زبان و ادب دے حصے وچ آیا ہووے، لفظیں کوں خوشبو دا لباس پواوݨ تاں صرف شاہد صاحب دا خاصا ہے ، کتنے لفظیں عزیز شاہد صاحب دے لہجے وچ جنم گھدے بے پناہ مثالاں انہیں دی شاعری وچ موجود ہن ، انہیں سرائیکی ادب دی اونویں آبیاری کیتی ہے جیویں ہک حقیقی وارث اپݨی شئے دا خیال کریندے، انہیں دیں مطبوعات وچ ، مݨ دریا تے، پݨیال ، پھل سرمی دے، اول ، چیݨاں، پھلیں بھری چنگیر، انہیں دے علاوہ، سلسلے سلوݨی دے، جیندے وچ شاہد صاحب محمد و آل محمد نال اپݨی محبت و عقیدت دا اظہار کیتے۔۔۔۔
شاہد صاحب ہر اوں صنف سخن نال انصاف کیتے جیندے وچ وی طبع ازمائ کیتی ہے چاہے او نظم ،غزل، گیت، قطعہ ، رباعی ہووے ، عزیز شاہد عزیز شاہد ہے۔۔۔
زخم ہے ایتلا کاری تاں کائے نی ۔
تیڈے سنگ پیار ہے یاری تاں کائے نی۔
وڈا بئیمان دل ہے نئیں منیندا،
اے دل ہے کہیں دا درباری تاں کائے نی ۔
وڈی پیاری ہے جندڑی جان میڈی ،
تیڈے پیریں کنوں پیاری تاں کائے نی۔
تیڈے جتیاں دے جوڑے تھئے کجوڑے،
کتھائیں سفریں تے ول تیاری تاں کائے نی۔
محبت وصل دی ہک رات شاہد ،
اوہا ہک رات وی ساری تاں کائے نی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جتھاں تیں پہل کیتی ہئ اتھائیں ان الوداع کیتی۔
سجݨ ہݨ تئیں سمجھ نئیں آئ سزا کیتی رہا کیتی۔
پویندا رہ گیاں میں مݨکا مݨکا مونجھ تیڈی کوں ،
قسم تیڈیں اکھیں دی نئیں کوئ تسبیح قضا کیتی۔
اوں پہلی پئوں جو پاتی نئوں ب نئوں تھی جاگ پئی وسوں،
ویرانی مہربانی میڈے جانی دا حیا کیتی۔
تیکوں شالا کڈاہیں وی نہ ملے انت سفریں دا،
ڈکھائے می پیر دے چھالے تاں دل رو کے دعا کیتی۔
میں ہر اݨ پھر دے پیریں کوں ابھردے سجھ ڈکھا ڈیساں،
مگر شرط ء جے تیڈے غم فجر توڑیں وفا کیتی۔
رلے سفریں تے گئے ہاوے کلھا ول آئیں کلھے سر تیں ،
اوکوں کتھ رول آئیں شاہد اے اپݨے نال کیا کیتی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئ پل نکھڑ کے دل توں بھلایا نہ تیں نہ میں ۔
مل پیوں تاں سکھڑاں موہو الایا نہ تیں نہ میں ۔
مر گئ ملݨ دی آس کفن پا کے ہجر دا،
گھر توں مگر جنازہ چوایا نہ تیں نہ میں ۔
پچھدی ہے رت اداس جو کتھ ہن نویں لباس،
چولیں تے ول کوئ سیپ کڈھایا نہ تیں نہ میں،
شیشہ بدن اساں اساں پتھر مزاج لوک ،
مر کیں وی اپݨا سوگ منایا نہ تیں نہ میں ۔
نفرت تاں ہئ ڈوہیں کوں مگر جان کیا وجہ ،
کیتا قبول پیار پرایا نہ تیں نہ میں ۔
شاہد دی اکھ دے تھل تے تیڈی ہنجھ دا راج ہا،
ساوݨ اکھیں توں ول کوئ وسایا نہ تیں نہ میں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر توں ڈھلدے ڈیکھ پچھاویں شام توں پہلے۔
شالا وقت کرے ول آنویں شام توں پہلے ۔
ساڈے سر تے رات آگئی ہے توں وی کائے ناہیں ،
جان اگیں ول آندا ہانویں شام توں پہلے۔
روندیں روندیں سجھ دے نال روانہ کیتم ،
ول سگدیں تاں ول کہیں ترانویں شام توں پہلے۔
اساں اگوہیں قرضے چاتے آس تیڈی تے،
ساہ تھی گئے ہن سانویں لانویں شام توں پہلے۔
اساں تاں شاہد آوݨ والی رات دا ڈکھ وی ،
لکھ چھوڑیا ہے تیڈے نانویں شام توں پہلے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کون تھی سگدے سانویں تیڈے ۔
چندر چمدے پچھانویں تیڈے۔۔

یہ بھی پڑھیے:

احسان اعوان  دیاں لکھتاں پڑھو

%d bloggers like this: